Poetry / General

Muzammil Shahzad

Jab Raat Dhali Aadhi Maikhane Ko Hosh Aaya

Jab Raat Dhali Aadhi Maikhane Ko Hosh Aaya
Angrai Li Botal Ne Paimane Ko Hosh Aaya

Utha Jo Naqaab Unka Deewane Ko Hosh Aaya
Jab Shamma Howi Roshan Parwane Ko Hosh Aaya

Phir Dard Utha Dil Mein Phir Yaad Teri Aayi
Phir Teri Mohabbat Ke Afsanay Ko Hosh Aaya

In Mast Nigahon Ne Girtay Ko Sambhala Hai
Sagar Ke Saharay Se Mastanay Ko Hosh Aaya

Wo Daikho Fana Daikho Jaam Aa Geya Gardish Mein
Wo Mast Nazar Uthi Maikhane Ko Hosh Aaya

Jab Raat Dhali Aadhi Maikhane Ko Hosh Aaya
Angrai Li Botal Ne Paimane Ko Hosh Aaya

· 1 Like · Mar 04, 2016 at 19:03
Category: general
 
Poetry / General

Muzammil Shahzad

May Aik Aik Ko Samjha Ke Pee Gaya

Saqi Ki Har Nigah Pay Bal Kha K Pee Gaya
Lehroon Say Khailta Hua Lehra K Pee Gaya

Ey Rehmat-E-Tamaam Meri Har Khata Muaf
Mein Intiha-E-Shouq Mein Ghabra K Pee Gaya

Peeta Baghair Izn Yeh Kab Thi Meri Majaal
Dar Pardah Chashm-E-Yaar Ki Sheh Pa K Pee Gaya

Samjhanay Walay sub Mujhe Samjha K Reh gaye
Lakin May Aik Aik Ko Samjha Ke Pee Gaya

· 1 Like · Mar 04, 2016 at 13:03
Category: general
 
Poetry / General

Muzammil Shahzad

Qatl Ke' Waqt Baa Wazoo Hum The'

Tere' maqtal ki aabroo hum the'
Qatl ke' waqt baa wazoo hum the'

Ye' nadii ab kise' bulaati hai?
Pahle' to is ki justajoo hum the'

Apni basti ko yaad hai ke' nahin
Us ki galiyon ki hao hoo hum the'

Apne' kaam aa gaii wo mahroomi
Pyaas ke' din kinaar-e-joo hum the'

Apne' kuch khwaab yaad aane' lage'
Raat maazi ke' roo ba'roo hum the'

· 1 Like · Mar 03, 2016 at 04:03
Category: general
 
Poetry / General

Muzammil Shahzad

ہاتھ چھوٹیں بھی تو رشتے نہیں چھوڑا کرتے

ہاتھ چھوٹیں بھی تو رشتے نہیں چھوڑا کرتے
وقت کی شاخ سے لمحے نہیں توڑا کرتے


جس کی آواز میں سِلوٹ ہو، نگاہوں میں شکن
ایسی تصویر کے ٹکڑے نہیں جوڑا کرتے


لگ کے ساحل سے جوبہتا ہے اُسے بہنے دو
ایسے دریا کا کبھی رُخ نہیں موڑا کرتے


جاگنے پر بھی نہیں آنکھ سے گرتیں کرچیں
اس طرح خوابوں سے آنکھیں نہیں پھوڑا کرتے


شہد جینے کا مِلا کرتا ہے تھوڑا تھوڑا
جانے والوں کیلئے دِل نہیں تھوڑا کرتے


جمع ہم ہوتے ہیں ، تقیسم بھی ہوجاتے ہیں
ہم تو تفریق کے ہندسے نہیں جورا کرتے


جاکے کہسار سے سرمارو کہ آواز تو ہو
خستہ دِیواروں سے ماتھا نہیں پھوڑا کرتے

· 1 Like · Feb 29, 2016 at 20:02
Category: general
 
Poetry / General

Muzammil Shahzad

انداز بیاں دیکھو

پھر وقت کے دامن سے لمہوں کو چرانا ہے
یادوں کے اجالوں میں بچپن کو بلانا ہے
آئین?فطرت کا وہ عکس سنہرا سا
پلکوں میں پرونا ہے، آنکھوں میں بسانا ہے
رشتوں کا تقدس ہے ، جذبوں کی صداقت ہے
یہ گھر ہے محبت کا اور میرا ٹھکانہ ہے
لڑتے ہیں جگھڑتے ہیں پھر بھی نہ بچھڑتے ہیں
یہ ایسا تعلق ہے، یہ ایسا خزانہ ہے
چڑیوں کا چہکنا ہے، ممتا ہی کی چھاءوں میں
اڑ جاتے ہیں سب پنچھی جس شاخ پہ دانا ہے
دنیا تو ہے دو پل کی، کس کو ہے خبر کل کی
کیوں آج کے لمحوں کو بے کار گنوانا ہے
لکھنا تھا ہمیں کیا کچھ، ہم بھول گئے سب کچھ
یہ اپنی حقیقت بھی کیا خوب فسانہ ہے
‘راجی‘ نے یہ بے باکی سیکھی ہے "یگانہ"سے
انداز بیاں دیکھو کس درجہ "توانا" ہے

· 1 Like · Feb 28, 2016 at 20:02
Category: general
 
Poetry / General

Muzammil Shahzad

Zahir Ki Nazar Se To Yahan Har Koi Daikhe

ظاہر کی نظر سے تو یہاں ہر کوئی دیکھے
اندر کے جہاں کے بھی تو منظر کوئی دیکھے
کیا اس کونظر آئے جز اصنام گری کے
آئینہء ہستی سےجو ہٹ کر کوئی دیکھے
مجھ پر ہی کھلیں اس رخ مہتاب کے پردے
میرے سوا اس چہرے کو کیونکر کوئی دیکھے
قاتل کا بیاں اور ہے شاھد کا بیاں اور
مقتول کی آنکھوں سے بھی منظر کوئی دیکھے
اک سوچ ہے گر یوں نہ ہوا تو کیا کروں گا
اک آس ہے شاید مجھے مڑ کر کوئی دیکھے
اس آس میں بھی ایسا ہے رقصاں، لہو افشاں
اے خامہ ء بسمل ترےا تیور کوئی دیکھے
فیضانٌ کسی شعر کی گہرائی کو پانا
ایسے ہے کہ قطرے میں سمندر کوئی دیکھے

· 1 Like · Feb 28, 2016 at 13:02
Category: general
 
Poetry / General

Muzammil Shahzad

Khauf E Sharar Lage Hai Mujhe

Na Khauf-e-barq, na Khauf-e-sharar lage hai mujhe
Khud apne baagh ke phoolon se dar lage hai mujhe

Ajeeb dard ka rishta hai saarii duniya main
Kahein ho jalta makaan, apna ghar lage hai mujhe

Main aik jaam hoon kis kis ke hont tak pohnchoon
Ghazab kii pyaas liye har bashar lage hai mujhe

Taraash laita hoon us se bhii aaeine Manzoor
Kisii ke haath ka patthar agar lage hai mujhe

· 1 Like · Feb 28, 2016 at 01:02
Category: general
 
Poetry / General

Muzammil Shahzad

عشق کرنے کے بھی آداب ہوا کرتے ہیں

عشق کرنے کے بھی آداب ہوا کرتے ہیں
جاگتی آنکھوں کے کچھ خواب ہوا کرتے ہیں
ہر کوئی رو کے دکھا دے یہ ضروری تو نہیں
خشک آنکھوں میں بھی سیلاب ہوا کرتے ہیں
کچھ فسانے ہیں جو چہرے پہ لکھے رہتے ہیں
کچھ پسِ دیدہ خونناب ہوا کرتے ہیں
کچھ تو جینے کی تمنا میں مرے جاتے ہیں
اور کچھ مرنے کو بیتاب ہوا کرتے ہیں
تیرنے والوں پہ موقوف نہیں ہے 'خالد'
ڈوبنے والے بھی پایاب ہوا کرتے ہیں

· 1 Like · Feb 27, 2016 at 18:02
Category: general
 
Poetry / General

Muzammil Shahzad

ایسے ضدی ہیں پرندے کہ اڑا بھی نہ سکوں

جنبی خواہشیں سینے میں دبا بھی نہ سکوں
ایسے ضدی ہیں پرندے کہ اڑا بھی نہ سکوں
پھونک ڈالوں گا کسی روز میں دل کی دنیا
یہ تیرا خط تو نہیں ہے کہ جلا بھی نہ سکوں
میری غیرت بھی کوئی شے ہے کہ محفل میں مجھے
اس نے اِس طرح بُلایا ہے کہ جا بھی نہ سکوں
پھل تو سب میرے درختوں کے پکے ہیں لیکن
اتنی کمزور ہیں شاخیں کہ ہِلا بھی نہ سکوں
ایک نہ ایک روز کہیں ڈھونڈ ہی لونگا تجھ کو
ٹھوکریں زہر نہیں ہیں کہ کھا بھی نہ سکوں

· 1 Like · Feb 27, 2016 at 05:02
Category: general
 
Sanam Baloch
Posted by kainaat siddique
Posted on : Jan 13, 2015

Random Post

New Pages at Social Wall

New Profiles at Social Wall

Connect with us


Facebook

Twitter

Google +

RSS